کالم/بلاگ

نیاپاکستان نئی زندگی

 

ملک آصف رضا

پرانےزمانےمیں لوگ سادہ تھےسب آپس میں بہن بھاٸی رشتہ دار محلے دار آپس میں میل جول کوترجیح دیتےتھے ایک دوسرےکےدکھ دردمیں شامل ھوتےتھے دوسروں کی تکلیف کواپنی تکلیف اوردوسروں کی خوشیوں کواپنی خوشیاں سمجھاجاتاتھا آج کانیادور نٸےانداض اور نٸ سوچ لےکرآیاھے
پہلےکےزمانہ میں لوگ باپ کوجنت کی چابی اور ماں کو جنت سمجھتےتھے اور یقیناً آج بھی وہ لوگ موجود ہیں لیکن جوحیثیت ان کی پہلے کے زمانہ میں ھواکرتی تھی وہ آج کےزمانہ میں نہیں
پچھلے دنوں ہی سوشل میڈیاپر ایک خبرراولپنڈی کے علاقہ سے چلی جس میں ایک نوجوان اپنی سگی ماں پر تشدد کررھاہےاور غلیزگالیاں دیتےہوٸےماں کوگھرسے نکلنے کابول رہاتھا جب میری نظراس ویڈیوپرپڑی تو اس وقت میرادل ایسے کررہاتھاکہ اگریہ نوجوان اگر ایسامیرےسامنےکرےیاپھرمل جاٸےتو میں اس کے منہ پرایسازوردارتمانچہ دوں کہ ساری زندگی اس کے کانوں سے اس تمانچہ کی گونج ختم نہ ہو
پھرمیں یہ سوچنےلگاشکل سے تو یہ جانور اچھی خاصی فیملی سےلگتاہے تعلیم یافتہ بھی ہے پھریہ ایسی حرکت کیوں کررہاہے اس وقت مجھے پتہ لگاکہ اس بدبخت بیٹے نے اپنی بیوی کی باتوں میں آکراپنی ماں پرتشدد کیاپھرمیں ان عورتوں کے بارے میں سوچنے لگا جوکچھ دن پہلے میراجسم میری مرضی کی مہم چلانے میں مصروف عمل تھیں اور ایسی گھٹیااور جہنمی سوچ ایسی ہی عیاش اور بدرنگی عورتیں ہیں رکھ سکتی ہیں
لیکن انہیں شایدیہ معلوم نہیں کہ اللہ رب العزت کی زات ہرلمحہ انسان کے شہہ رگ سےبھی قریب موجود ہے وہ یہ سب ماجرہ دیکھ رہاہے
یہ میرے ملک کے لوگ کس طرف چل دیٸے ہیں جنہیں آج کی رنگین دنیامیں کل کا گزراہوادن بھی یاد نہیں لوگ اسلام دشمن عناصرکی باتوں میں آکر ان کے ایجنڈاپر چلتے ہوٸےیہ بھی بھول گٸےکہ جس زات پر یہ تشددکررہے ہیں جسے یہ غلط کہہ رہے ہیں اسی ماں کی بدولت تم آج ہو دنیامیں پہلی سانس بھی تمہیں اسی ماں کے وسیلہ سے ملی تم نے دنیامیں چلنا پھرنا اور کھانہ پینابھی اسی ماں سے شروع کیا تمہیں کامیاب اور جوان بنانے میں بھی اسی ماں کا اہم کرداررہا تمہارے بچپن سے لیکر آج تک تم پر جتنی بھی مسیبتیں مشکلیں آٸیں انہیں ماں نے اپنے اوپرلیا اور آج تم غلیز سوچ میراجسم میری مرضی والی عورت کی وجہ سے یہ بھی بھول گٸے کے تمہیں اس دنیامیں لانے والی ہستی ماں ہے جس نے 9 مہینے تک تمہارے لیٸے تکالیف اور درد کو برداشت کیا اور تمہاری پرورش کرتے ہوٸے خد بھوکی رہی اور تمہاری بھوک کاخیال رکھا آج تم جوان ہوکر اسی ماں کو گالیاں دو اسی ماں پر تشدد کرو اسی ماں کو گھر سے نکالو
ارے بدبخت جاہلو ایک بات لکھ لو میری یہ تحریر محفوظ کرلوتم لوگ آج کسی کے بہکاوے میں آکر ماں کی تزلیل کروگے کل تمہارے ہاں بھی اولادنےآناھے اور انہوں نے بھی جوان ہونا ھے
اور وہی سب کچھ تمہارے ساتھ بھی ھوگا جو تم نے آج اپنی ماں کے ساتھ کیاھے
جیسی کرنی ویسی بھرنی یہ نظام قدرت ھے تمہیں اس بات کا احساس ضرورھوگا اور اس وقت تم بہت پچھتاٶ گے
مسلمان کی ماں جنت اور باپ جنت کا دروازہ ھے اور روز قیامت تک یہ سلسلہ ایسا ہی چلتارھےگا
اسلام دشمن عناصر نوجوان نسل کو یرغمال کریں گے اور لوگ گمراہی کے راستہ پرنکلیں گے لیکن زندہ دل لوگ اور دردل احساس رکھنے والے لوگ جلد ان جہالت زدہ اسلام دشمن عناصر سے تنگ آٸیں گے اور اپنی غلطی پر شرمندہ ھوں گے

تمام اہل اسلام اپنادفاع خدکریں تو ان مخالفین سے ہمیں کوٸی خطرہ نہیں اگر ھم ان کی باتوں میں آگٸےتو آنے والے وقت میں تعلیم اور ترقمی پزیر زمانہ دنیاوی جہنم کی شکل اختیارکرجاٸےگا

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button