کالم/بلاگ

محبّت سوچ سمجھ کر کرو

میں نے ایک فلسفہ لکھا جس میں نے واضح طور پر کہا کہ محبّت سوچ سمجھ کر کرو تو ایک بہن کو سخت اختلاف ہوا انکا کہنا تھا سوچ سمجھ کر سازشیں ہوتی ہیں محببتیں نہیں محبّت تو خود با خود ہوتی ہے تو ان کو میں نے یہ جواب دیا۔۔۔
(یہ تحریر لکھنے کا مقصد بہت سارے لوگوں کو نصیحت کرنا اور بہت سارے لوگوں کی غلط فہمی کو دور کرنا ہے)
جو محبّت سوچ سمجھ کر نہیں ہوتی وہ محبّت بھی نہیں ہوتی کیونکہ بنا سوچے سمجھے حادثات ہوتے ہیں اور حادثات کا انجام ہمیشہ برا ہوتا ہے محبّت کیلئے سامنے والے میں کوئی خوبی خامی ہو یا نا ہو لیکن وہ محبّت کا حقدار ہونا ضروری ہے اگر محبّت حقدار سے نہیں ہے تو محبّت فضول ہے اور فضول چیزوں کی کوئی قدر نہیں کرتا اس لیے محبّت سوچ سمجھ کر کریں تاکہ محبّت کا پاکیزہ احساس کسی مستحق کو نصیب ہو اور آپ کی اس بے لوث محبّت کی قدر ہو اس خیالی اور فلمی دنیا سے باہر نکالیں محبّت حقیت ہے کوئی افسانہ نہیں ہے کہ کچھ بھی تصور کیا اور پلک جھپکتے ہی ہو گیا کوئی بھی انسان بیشک کتنا بھی سچا ہے اچھا ہے تحقیق پھر بھی کریں تاکہ آپ کے بھروسے میں مزید اضافہ ہو۔۔۔
یہاں ایک مثال سے سمجھاتی ہوں قرآن دنیا کی واحد کتاب ہے جس میں شک کی رتی برابر بھی گنجائش نہیں لیکن اللہ‎ خود قرآن میں فرماتا ہے بیشک اس کتاب میں سمجھنے والوں کیلئے بہت سی نشانیاں ہے بس تم غور نہیں کرتے یعنی تحقیق نہیں کرتے سوچنے کی بات ہے جس میں شک کی گنجائش بھی نہیں ہے اس پر تحقیق کا حکم آگیا آخر کیوں اس کے پیچھے کیا مقصد ہو سکتا ہے اللہ‎ کا؟؟؟
تو جہاں تک میں اس کی گہرائی میں اتر پائی ہوں تو میری سمجھ میں واضح طور پر یہ بات آئی ہے کہ اللہ‎ قرآن کے بارے میں تحقیق کرنے کا حکم اس لیے دیتا ہے کہ اہل ایمان کا ایمان اور زیادہ بڑھ جاۓ ایمان کو بڑھانے کیلئے تحقیق کا حکم ہے جب انسان کا ایمان بڑھتا ہے وہ اللہ‎ پر اور زیادہ بھروسہ کرتا ہے اور اللہ‎ کے اور زیادہ قریب ہو جاتا ہے اس لیے میں کہتا ہوں ہر کام کی تحقیق کر لیا کرو بنا تحقیق کہ تم دھوکا کھا جاؤ یہ تمہارا قصور ہے دھوکا دینے والے کا نہیں تحقیق کا یہ بھی مطلب نہیں کے آزمائش کے نام پر کسی کو اذیت پہنچانے لگ جاؤ آزمائش کی ایک حد ہے اگر حد سے تجاوز کرو گے تو ہو سکتا ہے جس کی آزمائش لے رہے ہو وہ آپ کی ذات کا ہی منکر ہو جاۓ اور جان بوجھ کر آزمائش میں ناکام ہو کر اپکا دل توڑ دے❤

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button