اہم خبریںاہم خبریںپاکستان

ادبی تنظیم بزم الکرم (سرگودھا)کے زیرِ اہتمام ” نعتیہ مشاعرہ ”

سرگودھا(رپورٹ :رابعہ بصری،ارشد محمود ارشد)  ادبی تنظیم ” بزمِ الکرم ” کے زیرِ اہتمام ” پیس انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ سائنسز ، الکرم کیمپس ،پی ون مین کینال روڈ عزیز کالونی سرگودھا میں ایک نعتیہ مشاعرے کا انعقاد کیا گیا ۔ جس کی صدرات ملک کے معروف شاعر ، ادیب محقق اور ماہرِ تعلیم جناب پروفیسر ڈاکٹر ہارون رشید تبسم نے کی جبکہ مہمانانِ خصوصی ، معرف شاعر ، ادیت محقق جناب ڈاکٹر شاکر کنڈان اور معرف شاعر ادیب ماہرِ تعلیم جناب پروفیسر یوسف خالد تھے جبکہ مہمانِ اعزاز نعت کے حوالے سے ایک معتبر نام جناب ڈاکٹر مشرف حسین انجم تھے اور نظامت کے فرائض معروف شاعر ارشدمحمودارشد نے ادا کیے۔

 


نعتیہ مشاعرے کا باقاعدہ آغاز تلاوتِ کلامِ پاک سے ہوا جس کی سعادت حافظ مولانا محمد منیر نے حاصل کی۔
اس نعتیہ مشاعرے میں جن شعراء نے اپنے کلام سے نوازا اُن کے اسمائے گرامی اور نمونۂ درج ذیل ہے ۔

نہ اس دنیا کی رعنائی نہ جنت کی فضا دیکھے
ترا در دیکھ کے آقاؐ یہ عاصی اور کیا دیکھے

پروفیسر ڈاکٹر ہارون رشید تبسم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بند مٹھی میں پڑی کنکریاں بول اُٹھیں
ایسا اندازِ محبت بھی تو ہونا ہے عجب

ٖڈاکٹر شاکر کنڈان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نبیؐ کی نعت لکھنا چاہتا ہوں با ہُنر کر دے
مرے مولا زمانے میں مجھے بھی معتبر کر دے

پروفیسر یوسف خالد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہاں پر جگمگا اٹھتے ہیں ذرّاتِ تخیّل بھی جہاں سے نعت کی خوشبو ہَوا بن کر گزرتی ہے

ڈاکٹر مشرف حسین انجم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہزاروں یوں تو شاعر ہیں کہاں توفیق ہر اک کو
جسے توفیق دیتا ہے خدا وہ نعت کہتا ہے

خالد یوسفی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مرے آقاؐ کی نشانی رحمتوں کی بارشیں
ہیں جہاں میں جاودانی رحمتوں کی بارشیں

ڈاکٹر شفیق آصف
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اتنی تاب کہاں ہے مجھ میں ضبط کہاں کر پاتا ہوں
میں تو آپؐ کے ذکر پہ آقاؐ آنکھوں سے بہہ جاتا ہوں

ڈاکٹر عابد خورشید
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تری نسبتوں کا حوالہ ملا تو
ہوئی ذات ادنیٰ بھی ممتاز میری

ذوالفقار احسن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مخلوق کو خالق نے اندھیروں سے نکالا ہے
دو جگ میں ہوا نورِ محمدؐ سے اجالا ہے

حسنین اختر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یقین کیجیے فوراً ہی پونچھ ڈالے ہیں
وہ جب کبھی اشکِ رواں کو دیکھتے ہیں

نعیم رسول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب بھی میں نے باوضو اسمِ محمدؐ لکھ دیا
لفظ میرے خود ہی پھر نعتِ نبیؐ ہوتے گئے

شیراز کھچی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سلام و شوق زیارت کی آرزو میں رہے
تمام عمر مدینے کی جستجو میں رہے

سید صائم شیرازی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم غلامانِ نبیؐ ہیں دائم
زندہ رہنے کو یہی کافی ہے

سید دائم شیرازی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غمخوار جس کا کوئی ہوتا نہیں جہاں میں
ملتی ہے اس کو چاہت سرکارؐ کی گلی میں

محمد صفدر رشید
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آزمائش میں فقط "صلے علی” کہتا ہوں
کامیابی مرے قدموں میں چلی آتی ہے

اسامہ منیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ان کے علاوہ محترمہ ناہید کوثر نے نعتیہ نظم پیش کی اور جناب ثاقب رضوی نے بھی اپنے کلام سے نوازا ۔
نعتیہ مشاعرے کے مہمانِ خصوصی جناب ڈاکٹر شاکر کنڈان نے نعت کی تاریخی روایات پر روشنی ڈالی۔ اور صاحبِ صدر جنابِ پروفیسر ہارون رشید تبسم نے اپنے صدراتی خطبہ میں فرمائے کہ سرگودھا میں نعتِ کے حوالے سے بہت زیادہ کام ہوا ہے اور ہو رہا ہے اس کی مثال جنابِ رشک ترابی کا طویل نعتیہ کلام ، جناب ڈاکٹر محمد مشرف حسین انجم کا حمد و نعت کے حوالے سے کام اور خاص کر ان کا نعتیہ دیوان سرگودھا کی تاریخ میں پہلا نعتیہ دیوان ہے جناب شاکر کنڈان کا نعت کے حوالے سے تحقیقی کام سب کے سامنے ہے۔ انہوں نے بزمِ الکرم کے چئیرمین جناب ڈاکٹر محمد یوسف کے اس اقدام کو بھی سراہا۔
بعدازاں بزمِ الکرم کے چئیرمین جناب ڈاکٹر محمد یوسف نے بارِ دیگر آنے والے معزز مہمانانِ گرامی کا شکریہ ادا کیا اور بزم الکرم کے دیگر عہداران کے ناموں کا اعلان کیا۔ جو کچھ اس طرح سے ہیں ۔
سرپرستِ اعلیٰ جناب پروفیسر ڈاکٹر ہارون رشید تبسم
سرپرست جناب ڈاکٹر محمد وقاص غوری
چئیرمین جناب ڈاکٹر محمد یوسف
صدر جناب ڈاکٹر شفیق آصف اور جناب ذوالفقار احسن
جنرل سیکرٹری جناب ارشد محمودارشد
جوائنٹ سیکرٹری جناب اُسامہ منیر
سیکرٹری نشر و اشاعت محترمہ رابعہ بصری
سیکرٹری فناس جناب اُسامہ یوسف
اس کے بعد بزمِ الکرم کے سرپرستِ اعلیٰ جناب پروفیسر ڈاکٹر ہارون رشید تبسم نے تمام عہداران سے حلف لیا اور ڈاکٹر محمد یوسف کی اس کاوش کو سرانےساتھ ساتھ ڈاکٹر شفیق آصف ، ذوالفقار احسن اور ارشد محمود ارشد کی ادبی کاوشوں کی بھی تعریف کی اور کہا کہ ہماری کوشش ہوگئی کہ سرگودھا میں ادبی تقریبات میں وقتِ کی پابندی کی رسم کو زندہ کیا جائے۔
اس تقریب میں سامعین کی بھی کثیر تعداد نے شرکت کی اور انہوں نے بزمِ الکرم کے تمام اراکین کو کامیاب تقریب کے انعقاد کی مبارک باد پیش کی ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button