انٹرنیشنلدلچسپ و عجیب

ویت نام کا عالمی شہرت یافتہ سونے کا پل جسے ہاتھوں نے تھام رکھا ہے۔۔۔

دانانگ (ویب ڈیسک)ویت نام کے شہر دانانگ کے حسین و سبز پہاڑوں کے بیچ و بیچ تعمیر کئے گئے اس پل کا اقتتاح حال ہی میں ہوا ہے۔ اس نے اپنے منفرد ڈیزائن کے باعث چند ہی دنوں میں دنیا بھر کے سیاحیوں کی توجہ اپنی جانب مبذول کر لی ہے۔ اسے دیکھنے پر یوں محسوس ہوتا ہے کہ دیوہیکل ہاتھوں میں سنہرے رنگ کا دھاگہ ہو۔
دراصل یہ دیوہیکل ہاتھ اس پل کی بنیادیں ہیں، جنہیں قدرتی پہاڑوں کو تراش کر اور رنگ و روغن کر کے ہاتھوں کی شکل دی گئی ہے، جبکہ سنہرے رنگ کا دھاگہ پل کی راہ داری ہے جس پر سنہرا رنگ کیا گیا ہے۔ اسی سنہرے رنگ کی نسبت سے اسے گولڈن برج کا نام دیا گیا ہے، جبکہ مقامی افراد اور اس پل کی تعمیر کرنے والے ماہرین کہتے ہیں کہ اسے دیکھ کر ایسا لگتا ہے جیسے کہ اس پُل کو کسی نے اپنے ہاتھوں میں تھاما ہوا ہے۔
اسے پیدل چلنے والوں کے لیے بنایا گیا ہے، جس کی لمبائی ایک سو پچاس میٹر (500 فٹ) ہے۔ یہ دانانگ میں بانا کی پہاڑیوں پر بنایا گیا ہے، جو کیبل کار اسٹیشن کو سبز باغات سے جوڑتا ہے۔ سمندر کی سطح سے ایک ہزار میٹر (3280 فٹ) کی اونچائی پر واقع ہونے کی وجہ سے راہ گیر اس پل پر چلتے وقت یوں محسوس کرتے ہیں، جیسے وہ بادلوں کے بیچ ہوں، جبکہ اطراف میں موجود سبز باغات جیسے کسی طلسماتی کہانیوں کا دلکش منظر پیش کرتے ہیں۔
2 بلین امریکی ڈالرز کی لاگت سے تیار کردہ اس پل کو مقامی کمپنی ’’ٹی اے لینڈ اسکیپ‘‘ نے ڈیزائن کیا ہے۔ اس کے فن تعمیر کو دیکھنے کے لیے صرف دو ماہ کے مختصر عرصے میں دنیا بھر سے ہزاروں سیاح یہاں کا رخ کر چکے ہیں، جبکہ ویت نام کی حکومت کا کہنا ہے کہ رواں سال گزشتہ برس کے مقابلے میں زیادہ سیاح ویت نام آئیں گے۔ واضح رہے کہ گزشتہ برس دنیا بھر سے 2.7 ملین سیاحوں نے چھٹیاں گزار نے کے لیے ویت نام کا رُخ کیا تھا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button