پاکستان

این سی او سی کا اجلاس،5اپریل سے مکمل لاک ڈاؤن پر غور

پانچ اپریل سے شادی بیاہ کی اندرون خانہ و بیرونی سرگرمیوں اور تقاریب کے انعقاد پر پابندی


اسلام آباد (ویوز نیوز) نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر (این سی او سی) نے 5 اپریل سے ملک بھر میں تمام اِن ڈور، آؤٹ ڈور شادی و دیگر تقاریب پر فوری طور پر مکمل پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کا خصوصی اجلاس وفاقی وزیر اسد عمر کی زیر صدارت اسلام آباد میں منعقد ہوا، اجلاس میں چاروں صوبوں کے چیف سیکریٹریز نے شرکت کی۔
این سی او سی کے اجلاس کے دوران کورونا وبا کی تیسری لہر، کورونا وائرس کنٹرول کرنے کے اقدامات، اسمارٹ لاک ڈاؤن مزید سخت کرنے، کورونا وائرس کی تازہ ترین صورت حال اور ایس او پیز پر عمل درآمد کرانے سے متعلق حکمت عملی کا جائزہ لیا گیا۔
نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) کے اجلاس میں ہونے والے فیصلوں سے متعلق جاری کیے گئے اعلامیے کے مطابق کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے پابندیاں سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کے نتیجے میں شادی کی تقاریب، سوشل، کلچرل، سیاسی، جلوسوں سمیت تمام تقریبات پر مکمل پابندی ہو گی، تمام ان ڈور اور آوٹ ڈور سرگرمیوں پر فوری طور پر مکمل پابندی عائد کر دی گئی ہے۔
این سی او سی اعلامیہ کے مطابق صوبوں کو کورونا وائرس پھیلاؤ کے ہاٹ اسپاٹ کے نقشے فراہم کئے جائیں گے، کورونا وائرس پھیلاؤ کے علاقوں میں 29 مارچ سے لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا گیا ہے، صوبے اس سے پہلے حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے پابندی لگا سکتے ہیں۔
این سی او سی کی جانب سے جاری کیے گئے اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ این سی او سی کی جانب سے عائد کی گئی پابندیاں فوری طور پر نافذ العمل ہوں گی، تمام زمینی، فضائی اور ریلوے کا ڈیٹا دیکھ کر فیصلہ کیا جائے گا، صوبے این سی او سی کی طرف سے دیئے گئے ویکسینیشن کا ٹارگٹ بر وقت پورا کریں۔
اعلامیے کے مطابق بین الصوبائی ٹرانسپورٹ کم کرنے کے آپشن کا بھی جائزہ لیا گیا ہے، بین الصوبائی ٹرانسپورٹ سے متعلق حتمی فیصلہ صوبوں کی مشاورت سے کیا جائے گا۔
سماجی، ثقافتی اور سیاسی جلوسوں سمیت تمام تقریبات پر مکمل پابندی لگا دی گئی ہے تاہم ملک بھر میں انڈور اور آؤٹ ڈور شادی کی تقاریب پر پابندی 5 اپریل سے ہو گئی۔
این سی او سی کی عائد پابندیاں فوری طور پر نافذ ہوں گی جب کہ صوبے اس سے پہلے حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے پابندی لگا سکتے ہیں، صوبے این سی او سی کے دیے گئے ویکسی نیشن ہدف کو بروقت پورا کریں۔ اعلامیہ میں مزید کہا گیا ہے کہ بین الصوبائی ٹرانسپورٹ سے متعلق حتمی فیصلہ صوبوں کی مشاورت سے کیا جائے گا، تمام زمینی، فضائی اور ریلوے کا ڈیٹا دیکھ کر فیصلہ کیا جائے گا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button